Education In Pakistan

Papers, Notes, Books & Help For Students

UPDATED EDUCATIONAL NEWS INTERVIEW HELP FOR ALL JOBS ONLINE BOOKS SCHOLARSHIPS AVAILABLE INTERNSHIP JOBS

Tag: محکمہ تعلیم نے پنجاب بھر میں 46 ہزار سے زائد اساتذہ کو مستقل کر دیا

محکمہ تعلیم نے پنجاب بھر میں 46 ہزار سے زائد اساتذہ کو مستقل کر دیا

محکمہ تعلیم نے پنجاب بھر میں 46 ہزار سے زائد اساتذہ کو مستقل کر دیا

محکمہ تعلیم نے لاہور سمیت پنجاب بھر میں 46ہزار سے زائد ایجوکیٹرز کو ملازمت پر مستقل کر دیا ہے جو کہ محکمہ تعلیم کے مختلف سکولوں جن میں پرائمری ، مڈل اور ہائی سکولوں میں گزشتہ چار سے پانچ سالوں سے کنٹریکٹ کی بنیاد پر کام کر رہے تھے۔ سیکرٹری سکولز عبدالجبار شاہین کی جانب سے جاری کردہ نوٹیفیکیشن کے مطابق محکمہ تعلیم میں سال 2011 اور سال 2012ء میں الگ الگ کنٹریکٹ کی بنیاد پر 46 ہزار 686 ایجوکیٹرز بھرتی کیے گئے تھے۔
جن میں گریڈ 9 میں پرائمری سکولوں، گریڈ 14 میں مڈل سکولوں اور گریڈ 16 میں ہائی سکولوں میں ایجوکیٹرز بھرتی کئے گئے تھے جن کو کنفرم کرنے کیلئے محکمہ تعلیم کے اساتذہ نے ااحتجاج کا سلسلہ شروع کر رکھا تھا اور محکمہ تعلیم کے ساتھ مذاکرات کا سلسلہ چل رہا تھا۔جس پر محکمہ تعلیم کے سیکرٹری سکولز ایجوکیشن عبدالجبار شاہین نے لاہور سمیت پنجاب بھر میں کنٹریکٹ پر کام کرنے والے تقریباً 46ہزار 686 ایجوکیٹرز کو گزشتہ روز مستقل کر دیا ہے ۔اس سلسلے میں باقاعدہ نوٹیفیکیشن بھی جاری کر دیا گیا ہے۔ اس پر متحدہ محاذ اساتذہ کے چئیرمین طارق محمود اور سیکرٹری کاشف شہزاد چوہدری نے ایجوکیٹرز کے مستقل ہونے پر سیکرٹری تعلیم کا شکریہ ادا کیا ہے۔
اس حوالے سیپنجاب ٹیچرز یونین کے مرکزی عہدیداران جام صادق، چوہدری محمد سرفراز، رانا انوار، عبدالقیوم راہی، افضل کیانی، رحمت اللہ قریشی، شیخ اختر، عبد الطارق نیازی،رانا طارق، راؤ عابد، راؤ شمشاد، نجم النساء، صفدر کالرو، یونس حسن، منیر انجم ، امتیاز طاہر و دیگر نے کہا ہے کہ ہم محکمہ تعلیم سکولز پنجاب کی طرف سے کنٹریکٹ پر بھرتی ہونے والے اساتذہ کو ریگولر کرنے پر سیکرٹری سکولز پنجاب جناب عبدالجبار شاہین کا شکریہ ادا کرتے ہیں اور ہمار ا مطالبہ ہے کہ 6 مئی 2015 کو طے پانے والے اساتذہ کے دیگر مطالبات و معاملات کو بھی جلد از جلد پورا کیا جائے تاکہ اساتذہ برادری میں پیدا شدہ احساس محرومی کا خاتمہ جلد از جلد ممکن ہو سکے۔

educator news

Education In Pakistan © 2016